Top ***EID Mubarak*** Motivational Quotes for tomorrow in Urdu from Quran !!

Uncategorized

Top ***EID Mubarak*** Motivational Quotes for tomorrow in Urdu from Quran !!

 

 

فضیلت

رمضان المبارک کا با بر کت مہینہ اپنے اختتام کوپہنچنے والا ہے۔ رمضان المبارک اپنی رحمتوں ، برکتوں، نعمتوں اور مغفرت کی سو غات لے کر وآپسی کے سفر پر گامزن ہو رہا ہے۔ مگر جاتے جاتےروزہ داروں اور اس بابرکت مہینے کو عبادات و احکام الہی کے مطابق بسر کتنے والوں کو ایسی خو شخبری دے رہا ہے جو اس سے پہلے کسی مہینہ میں نہیں ملی ۔اور وہ ہے عید الفطر ۔
============================================

عید الفطر مسلما نوں کے مذہبی تہواروں میں سے ایک اہم اسلامی تہوار ہے ۔ عید کے معنی خوشی کے ہیں اور فطر کا مطلب پلٹ کر بار بار کھولنا کے ہیں۔ عید الفطر رمضان المبارک کے با برکت مہینے کا اختتام اور شوال کے آغاز پر منائی جاتی ہے ۔ یہ دراصل رمضان المبارک کے پورے مہینے کو اللہ تعالی کی خوشنودی اور مغفرت حاصل کرنے کیلئے کی جانے والی عبادت و ریاضت کا صلہ ہے جو عید الفطر کی شکل میں ملتا ہے ۔
============================================

شوال کا چاند نظر آنے پر رمضان المبارک کا اختتام ہو جاتا ہے اور ایک ایسی رات اور دن کا آغاز ہوتا ہے جس کی خو شی دنیا میں رہنے والے تمام مسلمانوں کو ہوتی ہے لیکن اس عید کی اصل لذت سے وہی لوگ صحیح معنوں میں لطف اندوز ہوتے ہیں جنہوں نے رمضان کے مہینے میں روزے رکھے ۔ اس کی راتوں میں قیا م کیا۔ اس مہینے کی برکتوں اور رحمتوں سے اپنے دامن بھر لئے ۔ اپنے رب کو راضی کر کے دنیا و آخرت میں کامیابی کی سند حاصل کی اور اخروی نجات کے ساتھ ساتھ اللہ رب العزت کی خوشنودی حاصل کی ۔
============================================
رمضان کے مہینے میں جتنی بابرکت راتیں اللہ تبا رک و تعالی نے ہمیں عطا فرمائیں ہیں ، اتنی شاید ہی کسی اور مہینے میں عنا یت کی گئی ہوں اور ان سب راتوں کا مجموعہ عید الفطر کی شب ہے ، جسے شبِ عید الفطر یا چاند رات بھی کہتے ہیں ۔ اس مبارک رات کو ” شب ا لجا ئزہ ” بھی کہتے ہیں جس کے معنی ” بدلہ دینے والی رات ” کے ہیں ۔جس طرح ایک طالبعلم محنت کرتا ہے اور بھر آخر میں اپنی محنت کا اجر یعنی انعام کا منتظر ہوتا ہے ۔ اور پھر نتیجہ کے دن اس کو اچھی کا ر کردگی پر انعام ملتا ہے ، بالکل اسی طرح اس شب میں اللہ تبا رک و تعالیٰ ماہِ صیام میں کی کئی عبادتوں اور ریاضتوں کا بدلہ دیتا ہے۔
============================================

اس رات میں اللہ رب الکریم رمضان المبارک کی تمام راتوں میں کی جانے والی بخشش و رحمت سے کئی گنا زیادہ مغفرت فرماتا ہے اور اللہ رب العزت کی یہ فیاضی و سخاوت تمام انسانوں کیلئے ہوتی ہے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد پاک ہے کہ :
” جب عید الفطر کی را ت ہوتی ہے تو اس کا نام (آسمانوں پر ) لیلۃ الجا ئزہ ( انعام کی رات ) سے لیا جاتا ہے۔ اور جب عید کی صبح ہوتی ہے تو اللہ رحمٰن فر شتوں کو شہروں میں بھیجتا ہے ۔ وہ زمین پر اُتر کر تما م گلیوں ، راستوں کے سروں پر کھڑے ہو جاتے ہیں اور ایسی آواز سے جسے جنات اور انسان کے علاوہ تما م مخلوق سن سکتی ہے ۔پکارتے ہیں : اے محمد ﷺ کی اُمت ، اس کریم رب کی (بارگاہ) کی طرف چلو جو بہت زیادہ عطا فرمانے والا ہے اور بڑے سے بڑے قصور معاف فرمانے والا ہے۔ ”
============================================

نبی اکرم ﷺ کا ارشاد گرامی ہے ۔ : ‘ جو شخص ثواب کی نیت سے دونوں عیدوں کی شب میں جاگے ( یعنی عبادت میں مشغول رہے ) تو اس کا دِل اس دن نہیں مرے گا جس دِن سب کے دِل مر جائیں گے۔ ‘ لہذا عیدین کی راتوں میں جا گنا مستحب ہے۔
============================================

اس حدیث مبارکہ سے شبِ عید الفطر یعنی چاند رات کی اہمیت واضح ہو تی ہے ۔ اور یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ چاند رات دراصل انعامات و اکرام کی رات ہے ، اس لئے تمام مسلمانوں کو اس رات کی قدر کرتی چاہئے ۔ عموماً ہو تا یہ ہے کہ چاند رات کو لوگ موج مستی ، ہلہ گلہ اور دوسری مصروفیات میں گزارتے ہیں اور ایسا دیکھا گیا ہے کہ خصوصاً نو جوان طبقہ اس رات کو جاگ کر گزارتے ہیں اور فضول قسم کی مصروفیات میں اس بابرکت رات کو ضائع کر دیتے ہیں ، جس کا انہیں قطعاً کوئی فائدہ بھی نہیں ہوتا ۔ لہذا اگر اس رات کو جاگنا ہی ہے تو کیوں نہ اس سے فائدہ بھی اُٹھا یا جائے اور فائدہ بھی ایسا جو آخرت میں بھی ہمارا ساتھ دے ۔

 

 

Sharing is the new sexy !

Leave a Reply